شاید بہت سے لوگوں کی طرح ایک عرصے سے مجھے بھی انسانیت اور اپنے وطن کیلئے کچھ کرنے کی فکر کھائے جا رہی تھی۔
انہی سوچوں میں گم چلتے ہوئے اچانک مجھے ایک بڑی عمر کا مزدور نظر آیا جو پتھروں سے بھرا ریڑھا کھینچتے ہوئے تھک کر فٹ پاتھ پر بیٹھا ہوا تھا
“چاچا ، کیسے ہیں آپ؟“
“الحمدللّھ، شکر ہے مالک کا جس نے اچھا رکھا ہے“
“آپ کافی خوش لگتے ہیں زندگی سے، ھمیشہ یہی کام کیا ہے؟ “ میں نے سوچا کے اس کی سادہ زندگی میں دو وقت کی روٹی کے علاوہ ملک و قوم کی کیا فکر ہو گی
“ ہاں جب سے جوان ہوا روزانہ یہی پتھروں کو توڑنے اور ڈھونے کا کام کیا ہے۔۔۔۔اور بیٹا ، خوشی تو آپ کے اندر ہوتی ہے“
“ چاچا ، کبھی ایسا کام کیا جس پر ندامت ہو ؟“ اس کی سادہ طرزِ زندگی کا خیال پھر آیا
“ ہاں بیٹا، ایک نادانی ایسی کی کہ آج تک شرمندگی ہے“
“واقعی!!؟“ میں دلچسپ کہانی کے لئے تیار ہو گیا۔
“ بیٹا جب میں نے نیا نیا کام شروع کیا تو جوانی کے جوش میں تیزی سے ریڑھا کھینچتے ہوئے راستے میں پتھر گراتا جاتا تھا- کچھ دنوں بعد خیال آیا کہ میرے گرائے ہوئے پتھروں سے میرے لوگوں کا راستہ مشکل ہو جاتا ہو گا۔ اس کے بعد سے خیال رکھتا ہوں کہ پتھر راستے میں نہ گرے اور اگر گر پڑے تو اٹھا لوں- لیکن جو کیا اس پر آج تک ندامت ہے“ چاچا نے آہ بھری
“ بیٹا آپ کیا کرتے ہو؟“
“ چاچا، میں ھمیشہ ملک و قوم کے لئے سوچتا ہوں۔۔۔۔۔لیکن کسی کے راستے سے پتھر کم نہیں کرتا“-“

 

Like many of my compatriots I was always thinking of doing something big for humanity and my country.

One day while walking on a street I saw an old man resting at the edge of the footpath as he stopped while pulling the cart.

I went to him ” Chacha, how are you?”

“Alhamdolillah, thanks to my Lord who has kept me in good condition”

” You look quite happy with life. Have you always done the same job?” I thought in his simple life he must be thinking of his daily needs only rather than thinking about the country or nation.

” Yes, ever since I grew up I have been doing the same job; crushing the stones and then transporting them to the site; and , happiness, my son, is something which is inside you”.

” chacha, have you ever done anything in life that you regret?” keeping in mind his simple life I did not think something would have happened..

” yes, I did something that I regret even today!”

” really?!” I got ready for an interesting story.

” yes, when I started this job, I used to pull the cart faster without caring about the stones falling out of it. Then one day I realized that those stones might have created hurdles for my people who walked on the streets. From that day on, I pull the cart slowly so that stones do not fall down and even if they do, I stop and pick them up. But I still regret what I did”

Then he asked me ” what do you do, son?”

” Chacha, I always think about my nation and my country, but I have not removed any stone from the street”.

 

Advertisements