مجھے آج بھی سب یاد ہے
بچپن کے وہ سارے خواب
تعبیر جو نہ کبھی ہوئے
وہ ان کہی سی خواہشیں
نہ کبھی جو پوری ہو سکیں
وہ چھوٹی چھوٹی شرارتیں
نہ کبھی جو سرزد ہو سکیں
جوانی کے وہ دن بھی جو
کٹے ہیں سارے ہی دھوپ میں
زندگی کے بہت سے راز
عیاں ہوئے اپنے ہی روپ میں
درد کی شدت کہ چلنا دوبھر
قدم میرے پر رکے نہیں
ہر دن کی اذیت جواں رہی
میری زندگی یوں رواں رہی
میرا پیار مجھ سے بچھڑ گیا
میں تو اپنے آپ سے ڈر گیا
میری زندگی ہی غریب تھی
یہ زیست شاید نصیب تھی
گر آج اپنی اس عمر میں
دیکھتا ہوں جو لوٹ کر
کوئی ایک قصہ حسیں نہیں
میں تو جیسے کبھی جیا نہیں
ماضی گرچہ تلخ سہی
مجھے پھر بھی یہ عزیز ہے
میرا ماضی مجھ سے مت چھینو
میرا ایک ہی تو رقیب ہے

یہ دنیا خوبصورت ہے“ سے ”

Translation
I remember it even today
dreams of childhood
that never came true
the unsaid wishes
that never got fulfilled
the little mischief
that could never happen
days of youth too
that were spent in the burning sun
many secrets of life
revealed in their own way
Intense pain made it difficult to move on
but it could not stop me
every day brought torture
my life kept moving this way
I lost my love
I was scared of myself
my life was empty
may be it was my fate
Now when I look back
there is not a single beautiful event
like I have never lived
Past was bitter
but still precious to me
do not take my past away
this is the only adversary I have

– fromYeh Dunya Khubsoorat HaiCopyrights Reserved

Advertisements