ہم خواب بیچتے ہیں
خریدار ہی نہیں
آنکھوں میں ہوس ہے ہر اک چیز کیلئے
دل میں مگر کسی کے لئے پیار ہی نہیں

بچپن کی آرزؤں کو کیا یہ ہو گیا
شاہین وہ اقبال کا کہیں پہ کھو گیا
سچ اور جھوٹ میں ہی فرق ہو نہیں سکا
انساں ہیں سب وہی مگر اعتبار ہی نہیں
ہم خواب بیچتے ہیں

وہ جنتِ نظیر میں اک گھر کی خواہشیں
وہ سائہِ دیوار اور در کی خواہشیں
ہے لٹ گیا یقین اور شوق نہ رہا
رشتوں کو کیا کریں گے جب یار ہی نہیں
ہم خواب بیچتے ہیں

ہاں ساتھ لے چلے ہیں ہم آس بس یہی
اک چھوٹا سا دیا ہے اور پاس کچھ نہی
اک پیڑ بو ہی جائیں کہ شاید بنے درخت
قسمت میں جیت بھی ہو صرف ہار ہی نہیں
ہم خواب بیچتے ہیں

یہ دنیا خوبصورت ہے“ سے ”

Translation
I sell dreams
there are no buyers
there is lust in every eye
but no love in the heart
I sell dreams

What happened to the wishes of childhood
Eagle of Iqbal is lost
hard to distinguish between truth and lie
people are same but there is no trust
I sell dreams

I had a dream of small home in my land
a dream of shadows and the door
but I don’t have trust nor the will
what will I do to relations when my love is lost
I sell dreams

Yet I do carry a hope with me
light of hope and nothing else
Let us sow a seed that might grow into a tree
we might win this time instead of losing
I sell dreams
there are no buyers

– fromYeh Dunya Khubsoorat HaiCopyrights Reserved

Advertisements