یہ شہرِ خموشاں ہے یاں تاریخ سوتی ہے
اس دنیا میں سب کی آخری منزل یہ ہوتی ہے
چلو کچھ باسیوں کا آپ سے تعارف کراتے ہیں
کیا تھے اور کہاں پر تھے، کہانی ہم سناتے ہیں
یہ صاحب تھے غرور اتنا کہ وہ تو ذات والے تھے
وہیں مزدور ہے لیٹا کئے ہاتھ جس نے کالے تھے
قریب ہی شاہ کچھ سو سال سے آرام کرتے ہیں
وہ ملزم بھی درباری جسے بدنام کرتے ہیں
وہ شاعر بھی جن کی شاعری دل کو لبھاتی تھی
بنا تختی کے وہ بھی ہے جو ان کے گیت گاتی تھی
وہ کونے میں ہے اک لیلیٰ تھا جس کو حسن کا یارا
اسی پہلو میں ہے سویا جسے تھا ساتھ میں مارا
وہیں پر ایک بچہ بھی جو ماں کے ساتھ سوتا تھا
سرہانے باپ ہے جو اپنی لاچاری پہ روتا تھا
وہ افسر ہے کہ جس کا نام تھا سارے زمانے میں
وہ چپڑاسی ہے جس کو لطف نہ تھا مال کھانے میں
وہ آگے کو ہے اک جنرل کیا تھاجس نے شرمندہ
شہید اک ہٹ کے سوتا ہےمگر ہے اب تلک زندہ
یہیں قاتل بھی اور مقتول ، منصف اور مجرم بھی
یہیں پر سو رہے ہوں گے، میں بھی ایک دن تم بھی

Translation

This is cemetery, history sleeps here
This is everyone,s final destination in this world
Let me introduce some of its citizens to you
Who they were and where they were
This gentleman was very proud because of his lineage
Next to him is a laborer who toiled hard with hands
Close by, there sleeps a king for last few centuries
and then that accused too who was maligned by king’s courtiers
That poet too whose poetry attracted people’s heart
and that anonymous courtesan too who used to sing his poetry
At the corner lies the woman who was all beauty
beside her is the one who was killed with her
Then there lies a child who wouldn’t sleep without his mother
next to him lies his father who would weep at his helplessness
Then there is officer who was notorious in the town
and his office boy who would not take the bribe
Few steps ahead lies a General who brought shame to the nation
and a martyr lies nearby but ‘he is still alive’
It is a place where lies murderer and murdered, judge and the criminal
One day everyone will be sleeping here including you and I

Advertisements