اس کی مٹی میں وفا تھی اس کے جذبوں میں ترنگ
اس کی ہر بات میں ذات بھی شامل تھی میری

میں کہ آزاد سمندر جو کہیں ٹکرایا
اس نے سمجھا کہ وہی ریت کا ساحل تھی میری

اس نے چاہا تھا مجھے میں تو مسافر نکلا
اس کو معلوم نہ تھا سفر ہی منزل تھی میری

کھو نہ جانا ” سے

Translation

She was loyal by nature, with hilarity of emotions
I was part of  everything she would do

I, a free sea, when touched her
she thought herself to be my shore

She loved me but I turned out to be a traveler
she did not know my travel was my destination

fromKho na JanaCopyrights Reserved

Advertisements