November 2007


I know not from what distant time
thou art ever coming nearer to meet me.
Thy sun and stars can never keep thee hidden from me for aye.

In many a morning and eve thy footsteps have been heard
and thy messenger has come within my heart and called me in secret.

I know not only why today my life is all astir,
and a feeling of tremulous joy is passing through my heart.

It is as if the time were come to wind up my work,
and I feel in the air a faint smell of thy sweet presence.

Rabindranath Tagore

Advertisements

تتلی کی مانند ہے ہر اک خوشی
پیچھے جو بھاگیں تو اُڑ جاتی ہے
جو نظریں چرا کر کہیں اور دیکھو
تو بن کے وفا خود چلی آتی ہے

یہ دنیا خوبصورت ہے“ سے ”

Translation

Happiness is like a butterfly
It escapes you if you run after it
As soon as you turn your eyes away from it
it comes to you like a faithful

– from “ Yeh Dunya Khubsoorat Hai” Copyrights Reserved

آؤ کہ آج غور کریں اس سوال پر
دیکھے تھے ھم نے جو‘ وہ حسیں خواب کیا ہوئے
دولت بڑھی تو ملک میں افلاس کیوں بڑھا
خوش حالیِ عوام کے وہ باب کیا ہوئے
جو ایک تھا حرم اور کعبہ بھی ایک تھا
پھر ذات پات کی یہ تفریق کیوں بڑھی
اک دن تھے کٹ مرے دوجے کے واسطے
پھر کیا ہوا کہ برسرِ پیکار ہو گئے
کیوں مول لگ رہا ہے شہیدوں کے خون کا
کیوں ہم ہی خون کے یوں طلبگار ہو گئے
کیوں راھبروں کے بھیس میں ڈاکو ہمیں ملے
کیوں ہم نے قاتلوں کو ہے ہر بار خود چنا
پھر ان کے جھوٹ ان کے کردار جان کر
ہم نے ہے بار بار کیوں سب یہ پھر سنا
جب میں بھی سچ ،تم بھی سچ، ہم سب ہی سچ یہاں
پھر جھوٹ، ہیر پھیر کیوں گلیوں میں آ گیا
کیوں حق ہمارے جھوٹے اصولوں میں دب گیا
کیوں باطل ہی تصنع کی گھٹا بن کے چھا گیا
انبار خواہشوں کے اور سب ہیں اجنبی
گھر کے چمن میں ایک ہے بازار سا لگا
انسان کے سوا یہاں ہر شے ہے قیمتی
مرتا گلی میں کیوں جو ہوتا کہیں سجا
جب بھوک سے بلکتا بچّہ ہے اک طرف
پھر مامتا کسی کی سامنے کھاتی ہے کس طرح
مظلوم کی پکار جب جاتی ہے عرش پر
نیند قاضی ِ شہر کو آتی ہے کس طرح
جب غریب کے گھر میں تو دیا بھی نہیں جلتا
روشن یہ شام سب کو جگاتی ہے کس طرح
آؤ کہ اب بھی وقت ہے ہم سب جواب دیں
آؤ کہ خود کو اپنا خود ہم حساب دیں
دیکھے جو ھم نے خواب وہ جھوٹ سب ہوئے
آؤ کہ اپنے کل کو سب سچّے خواب دیں

یہ دنیا خوبصورت ہے“ سے ”

Translation

Today lets ponder over the questions
What happened to the beautiful dreams we dreamed of
Why poverty has increased with the increase in wealth
what happened to the well being of masses
When we had one ‘Haram’, one’ Kaaba’
then why differences in caste and creed became dominant
There was a day when we would sacrifice our live for each other
what happened that we stand against each other
Why we are trading the sacrifices of our martyrs
why are we thirsty of each other’s blood
Why we always got dacoits in the form of leaders
why have we chosen killers again and again
Even after knowing their lies and character
why we have believed in what they say
When I, you and everyone of us is true
then where does the lie come on the street
why has the truth disappeared under our false principles
why has the lie spread its fake clouds
Loads of our wants and everyone is a stranger
it is like a bazaar in our very garden
Except human everything here is precious
human wouldn’t die on the street if he were in these shops
when a hungry child is crying on one side
how can some mother eat there
When an innocent’s scream touches the sky
how can the ruler of that state sleep
when there is no light in a poor man’s home
how can the city celebrate whole of the night
We still have time, lets everyone answer this
Lets hold ourselves accountable to ourselves
The dreams we had, turned out to be lies
Lets give true dreams to our future

– from “ Yeh Dunya Khubsoorat Hai” Copyrights Reserved

کچھ برس آرزو میں کاٹتے ہیں
کچھ برس انتطار کرتے ہیں
پا کے چاہیں کسی کو کیا ہم لوگ
ہم تو صرف خود سے پیار کرتے ہیں

یہ دنیا خوبصورت ہے“ سے ”

Translation

For few years we yearn for someone
and spend few more waiting for them
we don’t love when we get someone
we love only ourselves

– from “ Yeh Dunya Khubsoorat Hai” Copyrights Reserved

کیا ہم سے ہوئی ہے خطا ظالمو
کیوں دیتے ہو ہم کو سزا ظالمو

اس وطن کی حفاظت کی کھا کر قسم
اس کو دیتے رہے تم زخم در زخم
دشمنوں سے تو آنکھیں ملا نہ سکے
اپنے شہروں کو تم نے فتح کر لیا

چھین کر سب بہاریں خزاں بخش دی
اپنی مٹی کا حق یوں ادا کر دیا
تم کو احساس ہے تم نے کیا کر دیا؟

میرے بچوں نے فاقے کیے در بدر
تم کو رکھا کئے ہم تنومند مگر
اپنے خون اور پسینے سے شام و سحر
دے کے شمشیر کیا تم کو سینہ سپر
پر ہم کو ہی کمزور جانے ہوئے
اپنے بھائیوں کی خود تم نےجاں چھین لی
اپنی بہنوں کی سب ہی اماں چھین لی
میں نے اپنی ہی چادر سے ڈھانپا تمھیں
تم نے میری ہی مجھ سے قبا چھین لی
میری گردن پہ اپنے قدم گاڑ کر
میری عزتِ نفس اور حیا چھین لی
میرے ہونٹوں کو تم نے سلب کر دیا
میری آنکھوں سے تم نے ضیاُ چھین لی
کیسے احسان میرا ادا کر دیا
تم کو احساس ہے تم نے کیا کر دیا؟

ہاں ہم سے ہوئی ہے خطا غاصبو
ہم کو پھر سے کرو تم فتح غاصبو

یہ دنیا خوبصورت ہے“ سے ”

Translation

What is our fault o Tyrants
why do you punish us like this o Tyrants

You swore to defend this country
yet you inflicted wound after wound on it
you could not stand against the enemy
but you conquered your own cities
you took all the springs away from it
thats how you paid off your debt to this land
do you realize what you have done?

My children remained hungry but
I fed you to make you strong
I toiled hard day and night
to provide you arms so you stand up against foes
but you looked down to me as weak
you killed your own brothers
you deprived your sisters of safe home
I helped you to cover yourselves
and in response you took away my own cover
you put down your foot on my neck
and took away my pride my self respect
you shut my lips
and took away light of my eyes
thats how you paid off your debts to me
do you realize what you have done?

yes we have made a mistake, o Opressors
come conquer us again, o Opressors

– from “ Yeh Dunya Khubsoorat Hai” Copyrights Reserved

وہ اک نظر میں جو ہر کسی سا لگتا تھا
گیا وہ شخص جو مجھے زندگی سا لگتا تھا

ڈبو گیا میرے جیون کو پھر اندھیروں میں
وہ چاند، خود جو مجھے روشنی سا لگتا تھا

جب وہ بچھڑا ہے تو احساس ہوا ہے مجھ کو
میرے جذبوں کے لئے آگہی سا لگتا تھا

میرے وعدوں نے اسے طرزِ تکلّم بخشا
گو داستاں تھا مگر ان کہی سی لگتا تھا

ہر قدم خوف رہا اس کے چلے جانے کا
سچّی خوشیوں کی طرح عارضی سا لگتا تھا

بنا اس کے بھی میری عمر گزر جائے گی
میرا حصول جسے بندگی سا لگتا تھا

میرا تو ہے مگر شاید میرا نصیب نہ تھا
بہت قریب مگر اجنبی سا لگتا تھا

کھو نہ جانا ” سے

Translation

She who looked like any other girl
has gone, though she seemed like life to me

She who seemed like a moon to me
has thrown me in gloomy darkness again

Once she is gone, I have realized
she brought awareness of emotions in me

My promises gave her power to express
though she was a tale but an untold

I was scared of losing her at every step
she seemed momentary like true happiness

I will pass this life even without her
for whom my attainment was like worship

She is mine but was not my fate
so close yet a stranger

from ” Kho na JanaCopyrights Reserved