کیا ہم سے ہوئی ہے خطا ظالمو
کیوں دیتے ہو ہم کو سزا ظالمو

اس وطن کی حفاظت کی کھا کر قسم
اس کو دیتے رہے تم زخم در زخم
دشمنوں سے تو آنکھیں ملا نہ سکے
اپنے شہروں کو تم نے فتح کر لیا

چھین کر سب بہاریں خزاں بخش دی
اپنی مٹی کا حق یوں ادا کر دیا
تم کو احساس ہے تم نے کیا کر دیا؟

میرے بچوں نے فاقے کیے در بدر
تم کو رکھا کئے ہم تنومند مگر
اپنے خون اور پسینے سے شام و سحر
دے کے شمشیر کیا تم کو سینہ سپر
پر ہم کو ہی کمزور جانے ہوئے
اپنے بھائیوں کی خود تم نےجاں چھین لی
اپنی بہنوں کی سب ہی اماں چھین لی
میں نے اپنی ہی چادر سے ڈھانپا تمھیں
تم نے میری ہی مجھ سے قبا چھین لی
میری گردن پہ اپنے قدم گاڑ کر
میری عزتِ نفس اور حیا چھین لی
میرے ہونٹوں کو تم نے سلب کر دیا
میری آنکھوں سے تم نے ضیاُ چھین لی
کیسے احسان میرا ادا کر دیا
تم کو احساس ہے تم نے کیا کر دیا؟

ہاں ہم سے ہوئی ہے خطا غاصبو
ہم کو پھر سے کرو تم فتح غاصبو

یہ دنیا خوبصورت ہے“ سے ”

Translation

What is our fault o Tyrants
why do you punish us like this o Tyrants

You swore to defend this country
yet you inflicted wound after wound on it
you could not stand against the enemy
but you conquered your own cities
you took all the springs away from it
thats how you paid off your debt to this land
do you realize what you have done?

My children remained hungry but
I fed you to make you strong
I toiled hard day and night
to provide you arms so you stand up against foes
but you looked down to me as weak
you killed your own brothers
you deprived your sisters of safe home
I helped you to cover yourselves
and in response you took away my own cover
you put down your foot on my neck
and took away my pride my self respect
you shut my lips
and took away light of my eyes
thats how you paid off your debts to me
do you realize what you have done?

yes we have made a mistake, o Opressors
come conquer us again, o Opressors

– from “ Yeh Dunya Khubsoorat Hai” Copyrights Reserved

Advertisements