آؤ کہ آج غور کریں اس سوال پر
دیکھے تھے ھم نے جو‘ وہ حسیں خواب کیا ہوئے
دولت بڑھی تو ملک میں افلاس کیوں بڑھا
خوش حالیِ عوام کے وہ باب کیا ہوئے
جو ایک تھا حرم اور کعبہ بھی ایک تھا
پھر ذات پات کی یہ تفریق کیوں بڑھی
اک دن تھے کٹ مرے دوجے کے واسطے
پھر کیا ہوا کہ برسرِ پیکار ہو گئے
کیوں مول لگ رہا ہے شہیدوں کے خون کا
کیوں ہم ہی خون کے یوں طلبگار ہو گئے
کیوں راھبروں کے بھیس میں ڈاکو ہمیں ملے
کیوں ہم نے قاتلوں کو ہے ہر بار خود چنا
پھر ان کے جھوٹ ان کے کردار جان کر
ہم نے ہے بار بار کیوں سب یہ پھر سنا
جب میں بھی سچ ،تم بھی سچ، ہم سب ہی سچ یہاں
پھر جھوٹ، ہیر پھیر کیوں گلیوں میں آ گیا
کیوں حق ہمارے جھوٹے اصولوں میں دب گیا
کیوں باطل ہی تصنع کی گھٹا بن کے چھا گیا
انبار خواہشوں کے اور سب ہیں اجنبی
گھر کے چمن میں ایک ہے بازار سا لگا
انسان کے سوا یہاں ہر شے ہے قیمتی
مرتا گلی میں کیوں جو ہوتا کہیں سجا
جب بھوک سے بلکتا بچّہ ہے اک طرف
پھر مامتا کسی کی سامنے کھاتی ہے کس طرح
مظلوم کی پکار جب جاتی ہے عرش پر
نیند قاضی ِ شہر کو آتی ہے کس طرح
جب غریب کے گھر میں تو دیا بھی نہیں جلتا
روشن یہ شام سب کو جگاتی ہے کس طرح
آؤ کہ اب بھی وقت ہے ہم سب جواب دیں
آؤ کہ خود کو اپنا خود ہم حساب دیں
دیکھے جو ھم نے خواب وہ جھوٹ سب ہوئے
آؤ کہ اپنے کل کو سب سچّے خواب دیں

یہ دنیا خوبصورت ہے“ سے ”

Translation

Today lets ponder over the questions
What happened to the beautiful dreams we dreamed of
Why poverty has increased with the increase in wealth
what happened to the well being of masses
When we had one ‘Haram’, one’ Kaaba’
then why differences in caste and creed became dominant
There was a day when we would sacrifice our live for each other
what happened that we stand against each other
Why we are trading the sacrifices of our martyrs
why are we thirsty of each other’s blood
Why we always got dacoits in the form of leaders
why have we chosen killers again and again
Even after knowing their lies and character
why we have believed in what they say
When I, you and everyone of us is true
then where does the lie come on the street
why has the truth disappeared under our false principles
why has the lie spread its fake clouds
Loads of our wants and everyone is a stranger
it is like a bazaar in our very garden
Except human everything here is precious
human wouldn’t die on the street if he were in these shops
when a hungry child is crying on one side
how can some mother eat there
When an innocent’s scream touches the sky
how can the ruler of that state sleep
when there is no light in a poor man’s home
how can the city celebrate whole of the night
We still have time, lets everyone answer this
Lets hold ourselves accountable to ourselves
The dreams we had, turned out to be lies
Lets give true dreams to our future

– from “ Yeh Dunya Khubsoorat Hai” Copyrights Reserved

Advertisements