خیالوں میں گم تھا میں جیون سے نالاں
غم بھی کہیں تھا زمانے کا مجھ کو
وہ دفتر کے اوقات، مسئلے کہیں تھے
کئی الجھنیں تھیں پریشانیاں تھیں
اپنے حالات پر بھی شاکی ابھی تھا
عشق کا درد دل میں باقی ابھی تھا
موسم بھی مجھ کو ستاتا بہت تھا
گاؤں اپنا مجھے یاد آتا بہت تھا
مہربان طعنوں سے گھبرا گیا تھا
بیوی کے کھانوں سے تنگ آ گیا تھا
ساری فکروں کو لے کر کھانے جو بیٹھا
روٹی کناروں سے جل سی گئی تھی
نمک کم پا کر سب بندھن ہی ٹوٹے
اٹھا کر باہر ساری تھالی کو پھینکا
جو جھانکا گلی میں تو منظر عجب تھا
روٹی پہ لپکے تھے بدحال بچے
آنکھوں میں ان کے تشکر کے آنسو
شرمندہ مالک سے کرتے تھے مجھ کو

یہ دنیا خوبصورت ہے“ سے ”


Translation

I was lost in my thoughts, grumpy about life
was worried about the world too
Working hours and problems in the office
had many concerns and worries
I was still whiny about my life
and my heart still ached for the lost love
Weather too was affecting my moods
and I was missing my village
I was fed up of sweet nagging
and the cooking of my wife
With all these in my mind,
I sat down for the dinner
a bread with burnt edges
and less salt made me lose my temper
I threw the tray out on the street
and what I saw was a strange scene
Poor little kids rushed to grab that bread
With tears of gratitude in their eyes
that filled me with remorse in front of my ‘Lord’

– fromYeh Dunya Khubsoorat HaiCopyrights Reserved

Advertisements