مجھ کو دیکھا ہے تم نے
مجھ کو تم جانتے ہو

آوارہ سڑکوں کا بچّہ ہوں میں
مجھ کو پہچانتے ہو

جب سے آنکھیں کھلیں
مجھ کو سڑکیں ملیں
گود کیا ہے میں نے نہ جانا کبھی
پیار سچ ہے، یہ نہ مانا کبھی
کبھی بستر ملا آسماں کے تلے
کبھی کوڑے کنارے پناہ مل گئی
میں کھلونوں کو پا کے روتا بھی کیا
مجھ کو روٹی کے ٹکڑے میں جاں مل گئی

کچھ خواب ہی ہیں حقیقت میری
کیا خواب ہی ہیں قسمت میری؟
وہ پڑھنے ، لکھنے، کتابوں کا خواب
وہ روزانہ سکول جانے کا خواب
وہ کپڑے بدلنے، نہانے کا خواب
وہ بننے سنورنے دکھانے کا خواب
میز پر بیٹھ کر کھانا کھانے کا خواب
وہ اپنی ہی سائیکل چلانے کا خواب
بڑا آدمی ایک بننے کا خواب
سب کو بڑا پھر بنانے کا خواب

تعبیر خود ان کو کر لوں گا میں
اپنے خوابوں میں خود رنگ بھر دوں گا میں
بس میٹھے سے اپنے کچھ بول دو
میرے ہاتھوں میں
بس تم نہ کشکول دو

یہ دنیا خوبصورت ہے“ سے ”

Translation

You have seen me
You know me
I am wandering kid of the street
You recognize me

When I opened my eyes
I was on the streets
I never knew what a cradle is
I never thought love is a reality
Sometimes I slept under the sky
and at others just beside the trash
How could I cry after getting the toys
I found life in the piece of bread

Few dreams are my reality
Are only dreams my fate?
A dream of reading, writing and of books
A dream of daily going to school
A dream of changing clothes and having bath
A dream of being dressed up and showing off
A dream of having dinner at the table
A dream of riding my own bicycle
A dream of being a great man
A dream of then turning others into same

I, myself, will make my dreams come true
I will color all my dreams
You can just bestow some sweet words
and do not give me the begging bowl!

– fromYeh Dunya Khubsoorat HaiCopyrights Reserved

Advertisements