October 2008


پہلا حصّہ پڑھنے کے لئے یہاں جاٰئیں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ اک شام ڈھلے – اک خط

ہاں یاد مجھے ہے مینہ کا زور
وہ کالی گھٹا ، بادل گھنگور
اس جیون کی سب پیاس لئے
تیرے دو نینوں کی آس لئے
تیرے دروازے دستک دی تھی
اک شام ڈھلے

چوڑی کی کھنکار لئے
پائل کی جھنکار لئے
ہاتھ وفا سے لال لئے
ان کالی آنکھوں میں کجرا
وہ الجھے الجھے بال لئے
مسکان لئے ان ہونٹوں پر
وہ بہکی بہکی چال لئے
یوں سامنے پھر تم آئی تھی
اک شام ڈھلے

دیکھ تمہیں ہوئے ہوش بھی گم
اک پل کو لگا سب کچہ ہو تم
دو بوند کو جس کی ترسا تھا
ندیا ، جھرنا، ساگر ہو تم
ہر شعر میں تم ، ہر غزل میری
ہو نظم میری، عنواں ہو تم
جب میں نے کیا اظہارِ وفا
آنکھوںنے کیا اقرار مگر
ہونٹ تمھارے لرز گئے
اندیشوں کی سوغات لئے
مایوسی کا دامن ساتھ لئے
ھم لوٹ گئے
اس شام ڈھلے

اب راہ ہماری دیکھو نہ
اب آس ختم، خود ہی کہہ دو
اس چوڑی ، پائل، کنگنا سے
اس مہندی ، کجرے، بندیا سے
سب سپنوں کی بارات لئے
سب خوشیوں کی سوغات لئے
وہی پیار بھرے انداز لئے
اور دل میں وہی جذبات لئے
دیکھو نہ ہم پھر آئے بیں
اِس شام ڈھلے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

کھو نہ جانا“ سے “

For First part read here….. An evening…A Letter

Translation

Yes I remember the heavy rains
The dark cloud and overcast
With thirst of my life
and hope for those eyes
I knocked at your door

With chattering of bangles
with ringing bells of anklets
with red hands of faithful
with kohl in the black eyes
with wandering tresses
with smile on lips
with staggering walk
you showed up in front of me
One evening

I lost my senses when I saw you
For one moment you seemed to be everything
Something I always felt thirst for
You were that river, falls, ocean
In my every verse, you are like my ghazal
poem is mine but you are the subject
When I expressed my feelings
You acknowledged with your eyes
but you did not say anything
With gifts of confusion
and company of dejection
I went back
That evening

Look, now look my way no more
your hope is over now, tell this to
your bangles, anklets and bracelet
your henna, kohl and bindya
With all your dreams
and gift of your happiness
With same expressions of feelings
and same feelings in the heart
I have come here again
This evening…….

from ” Kho na JanaCopyrights Reserved

Advertisements

تو نے مڑ کر جو صدا دی تو مجھے یاد آیا
گمنام سے رستوں پہ تیرا اک وعدہ
ایسا وعدہ کہ عہد سب نبھانے کا
وہ اک قسم کہ دوجے کو
نہ بھلانے کی
تم نے یہ عہد کیا تھا ہم سے
تھکن سے چور یا کہیں حادثے میں گم ہو کر
بچھڑ جو جائیں تو دیکھو گے نہ کہیں مڑ کر
کہ زندگی نام ہے بڑھتے ہی چلے جانے کا
پیچھے رہ جائیں ، انہیں ھمسفر نہیں کہتے
تیری آواز سنی تو مجھے احساس ہوا
اپنی ساری حسیں قسموں کی طرح
آخری وعدہ بھی تو نے توڑ دیا

کھو نہ جانا“ سے “

Translation

Your turning around and calling me
has brought back the memories of your promise
A promise of keeping all the vows
A swear not to forget each other ever
You promised me that
“Separated by hardships or lost by accident
we will not look back
As life has to move forward
and one left behind can not be called a companion”
As I heard your voice, I have realized
Like all of your beautiful vows
you have broken your last promise

from “ Kho na Jana” Copyrights Reserved

میں حسنِ جاناں کے قصّے کہوں تو کس سے کہوں
کہ گونجتا میری گلیوں میں پھر ہے سنّاٹا

Who can I tell tales of beauty of the lover
In my streets, echoes a dead silence again

The day whole of the nation cried together, second time in our country’s history…

May Allah save us from all calamities.

Allah bless the souls that went before us…and those who suffered…and all of us.

…. and spreads its colorful gloom.

خزاں نے پھر سے بکھیرے ہیں رنگ اداسی کے۔۔۔۔