اک روز گزرتے ہوئے ایک گلی سے
اک علم کے طالب نے مجھے روک کے پوچھا

میری تو نسل سنتی ہے صرف آپ کی باتیں
ہم نے نہ کبھی آپ کو کچھ کرتے ہے پایا

کیا آپ نے صرف دی ہے ہمیں علم کی دولت
یا خود بھی کبھی اس پہ عمل کر کے دکھایا؟

کیا آپ نے سچّ صرف کتابوں میں لکھا ہے
یا آپ نے یہ سچ کبھی اس شہر میں پایا؟

کیا آپ نے صرف جھوٹ سے لڑنے کو کہا ہے
ہا آپ نے باطل کو کبھی خود بھی ہرایا؟

کیا آپ نے صرف وعدوں کے سبق یاد کرائے
یا آپ نے خود بھی کوئی وعدہ ہے نبھایا؟

کیا آپ نے کاغذ بھرے اقوالِ زریں سے
یا آپ نے خود ان سے ہے کوئی راز بھی پایا؟

کیا آپ نے صرف انسان کی قیمت ہے بتائی
یا آپ نے خود بھی کسی انساں کو بچایا؟

کیا آپ نے جاں دینی وطن پر ہے سکھائی
یا آپ نے خود ہے کچھ اس مٹی پہ لٹایا؟

کیآ آپ نے کیں خالق سے صرف ملنے کی باتیں
یا آپ نے اس کو ہے کبھی خود میں بھی پایا؟
۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دو قدم چلا میں مگر احساسِ شکست سے
نظروں کو چراتے ہوئے اس سے یہ بولا
میری دعا ہے کہ تم سب ہو مختلف تا کہ
کسی گلی میں نہ میری طرح شرمندہ ہو
ہمیں ملال ہے جو بھی کہا عمل نہ کیا
مگر میں خوش ہوں کے تم میرا آئندہ ہو

یہ دنیا خوبصورت ہے“ سے “

Translation

One day while passing through a street
A student stopped and asked me

My generation hears all your talks
but we have never seen you doing anything yourself

Have you only given us the knowledge
or have you ever acted on it yourself?

Have you only written the truth in books
or have you ever found this truth in this city?

Have you only told to fight against the lies
or have you ever defeated the falsehood yourself?

Have you only taught lessons of keeping promises
or have you ever kept any promise yourself?

Have you only filled papers with quotations
or have you found any secrets from them yourself?

Have you only lectured on the value of human
or have you saved any human yourself?

Have you only taught to lay down life for the country
or have you sacrificed anything for this land yourself?

Have you only taught of searching THE CREATOR
or have you ever found HIM in yourself?

….

With guilt of defeat I walked few steps
avoiding the eye contact replied to him
I pray that you all are different so that
you don’t experience remorse like this
We regret whatever we said we did not act upon
but I am glad that you are our future

From ” Yeh Dunya Khubsoorat Hai ( This World is beautiful ) Copyrights Reserved

Advertisements