سارے جہاں میں جانے کسے ڈھونڈتا رہا
اپنے ہی شہر میں، میں بہت اجنبی رہا

ویراں تھی چشم اور دلِ ناداں اداس تھا
موجوں میں کب سوائے یہاں تشنگی رہا

چھوڑا تھا ہاتھ تھام کے تم نے جس نگر
بھروسہ کسی پہ پھر نہ میرا اس گلی رہا

ہر روشنی کرن کی بلاتی تھی تیری اوڑھ
پھر بھی میں تجھ سے دور اے زندگی رہا

کھو نہ جانا“ سے “

Translation

In whole of the world I kept on searching for some one
becoming a stranger in my own town

Eyes dried out and foolish heart was sad
Sea waves give you nothing except the thirst

The town where you left me
I never trusted anyone in that town again

Light of every hope kept pulling me towards you
but I still stayed away from you O’ life

from ” Kho na JanaCopyrights Reserved

Advertisements